خواتین ہاکی ٹیم کے کوچ پر کھلاڑی کو ہراساں کرنے کا الزام

سیدہ سعدیہ نے وزیر پنجاب کھیل اور ہاکی فیڈریشن کو خط لکھ کر واقعے سے آگاہ کر دیا۔ کوچ سعید خان کا موقف ہے کہ میں نے کھلاڑی کو ڈسپلن کی خلاف ورزی پر ڈانٹا تھا، باقی الزامات غلط ہیں۔

کرکٹ کے بعد ویمن ہاکی پلیئرز بھی جنسی طور پر ہراساں ہونے لگیں۔ انٹرنیشنل کھلاڑی سعدیہ نے کوچ پر ہراساں کرنے کا الزام لگا دیا۔ سید سعدیہ نے الزام عائد کیا ہے کہ کوچ سعید خان نے مجھے رات کو ملنے کا کہا اور کمرے میں بند کر کے نا صرف میرے ساتھ زور زبردستی کی گئی بلکہ میرا منہ بھی دوپٹے سے باندھنے کی کوشش کی گئی۔ قومی کھلاڑی سعدیہ نے وزیر کھیل پنجاب اور ہاکی فیڈریشن کو خط لکھ کر انصاف کی اپیل کی ہے۔ دنیا نیوز کے ذرائع کے مطابق فیڈریشن نے خاتون کھلاڑی کی شکایت پر تفتیش شروع کر دی ہے۔دوسری جانب کوچ سعید خان نے الزامات کی سختی سے تردید کرتے ہوئے انھیں من گھڑت قرار دیا ہے۔ کوچ کا کہنا ہے کہ میں نے قومی کھلاڑی سعدیہ کو ڈسپلن کی خلاف ورزی پر صرف ڈانٹا تھا، مجھ پر لگائے گئے باقی الزامات میں کوئی صداقت نہیں اور وہ سراسر غلط ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں