آج کا سب سے بڑ ا انکشاف : حبیب بنک پر پابندی لگائے جانے کی خبر آ گئی

سینٹ کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ کو آ گاہ کیا گیا ہے کہ حبیب بنک کی نیو یارک برانچ کو سعودی عرب کے بنک الراجی کے سا تھ کاروبار کرنے کی وجہ سے پابندیوں کا سامنا کرنا پڑا، بنک کی ریٹنگ کم کر دی گئی اور بعد میں بنک کی کارکردگی کو غیر تسلی بخش قرار دے دیا۔ حبیب بنک پر 225ملین ڈالرز کا جرمانہ لگا یا گیا۔‌ حبیب بنک نے ریگولیٹر کی تمام شرائط پوری کرنے کی کوشش کی، ریگو لیٹر نے الراجی کے ساتھ تما م ٹرانزیکشنز چیک کیں اور ایگزیکٹ کمپنی کا حبیب بنک میں اکاونٹ تھا جس میں لین دین مشتبہ قرار دیا ، بنک میں قواعد و ضوابط عملدرآمد کے سلسلے میں خامیاں بھی مو جو د تھیں۔ نیشنل بینک بنگلہ دیش کے 18.5 ارب روپے سیکنڈل کے حوالے سے فراڈ میں ملوث سات ملزمان کو گرفتار کیا جا چکا ہے، بنگلہ دیش میں فراڈ میں کوئی ریکوری نہیں کی گئی، ملزمان نے پلی بارگین کیلئے رابطہ کیا تو غور کریں گے، چین میں نیشنل بنک کی شاخ کھولنے کے حوالے سے کام جاری ہے بیجنگ سے منظوری ہو چکی ہے۔

Image result for hbl

ان خیالات کا اظہار نیشنل بنک کے صدر، سٹیٹ بنک ، نیب اور حبیب بنک کے حکام نے کمیٹی کو بریفنگ دیتے ہوئے کیا، کمیٹی نے سٹیٹ بنک کو ذرعی ترقیاتی بنک کے نان پرفارمنگ قرضہ میں اضافہ کے حوالے سے رپورٹ تیار کرکے جمع کرانے کی ہدایت کی۔ بدھ کو سینٹ کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ کا اجلاس چئیرمین کمیٹی سینیٹر سلیم مانڈوی والا کی زیر صدارت ہوا۔ اجلاس میںنیشنل بینک بنگلہ دیش کے 18.5 ارب روپے سیکنڈل کے معاملہ پر نیب حکام نے بریفنگ دی۔ نیب حکام نے کمیٹی کو آ گا ہ کیا کہ نیشنل بینک بنگلہ دیش فراڈ کے خلاف 15 اپریل 2017 کو احتساب عدالت میں ریفرنس دائر کیا گیا۔ فراڈ میں ملوث سات ملزمان کو گرفتار کیا جا چکا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں